ازلی دشمن

                                ازلی دشمن

جہاں میں ہے شیطاں، ابن آدم کا دشمن                                         دعوتِ معصیت میں، وہ ہے رہتا مگن

ابن آدم ازل سے شیطاں کا ہدف ہے                                            ابن آدم سے ہرپل، اس کو ہے بس جلن

سوء و بد کو ہے دیتا خوش نمائی کی صورت                                 اس کو آتا ہے ازحد ملمع سازی کا فن

اس کا مکر و دجل، پر خطر ہے بہت                                           ورغلاتا ہے بن کر، خیرخواہ وسجن

وار کرتا ہے وہ، مخفی انداز سے                                               ہر کسی کو ہے کرتا، مبتلائے فتن

اس کا مقصد یہی ہے، حق سے ہٹ جائیں لوگ                               اپنے مقصد کی خاطر، وہ ہے کرتا جتن

رب کا عاصی ہے وہ، خود پسندی پہ نازاں                                   اس نے ٹھکرادیا، رب کا امر و اذن

رب کی لعنت کا پھر، مستحق بن گیا                                            عنقریب وہ بنے گا، جہنم کا ایندھن

جس نے کی اتباع، شیطاں کی یہاں                                           آخرت میں جہنم، اس کا ہوگا سکن

راہِ شیطاں پہ نہ چل، تو کبھی اثریؔ                                          چاہتا ہے اگر تو آخرت میں امن

About حافظ عبدالکریم اثری

Check Also

نظم

(نظم) شیخ ذوالفقارعلی طاہر رحمہ اللہ داغِ مفارقت دے گئے شیخ ذوالفقار طاہر      …

جواب دیجئے