Home » حافظ عبدالکریم اثری

حافظ عبدالکریم اثری

نظم

ازلی دشمن جہاں میں ہے شیطاں، ابن آدم کا دشمن دعوتِ معصیت میں، وہ ہے رہتا مگن ابن آدم ازل سے شیطاں کا ہدف ہے ابن آدم سے ہرپل، اس کو ہے بس جلن سوء و بد کو ہے دیتا خوش نمائی کی صورت اس کو آتا ہے ازحد ملمع سازی کا فن اس کا مکر و دجل، پر خطر …

Read More »

نظم

علم اور طالب علم کی فضیلت علوم دیں طلب کرنا، سراسر یہ بھلائی ہے بڑا فاضل ہے وہ جس نے، محب ان کی پائی ہے علم دیں کا جہاں میں ہے ہر اک شے سے گراں مایہ فضیلت علم دیں کی سن، جہاں میں انتہائی ہے علم نور ہدایت ہے، خصوصی ارمغان رب جہالت سے مکدر اس فضا میں روشنائی …

Read More »

مرحبا ماہِ رمضان

مبارک یہ گھڑیاں آئیں رمضان کی ساتھ لائی ہیں رحمت رحمان کی ہر طرف پھیلتی ہیں رحمتیں دلنشیں بارشیں ہوتی ہیں، رب کے فیضان کی یہ مبارک مہینہ، ہے عمل کا خزینہ کَس دی جاتی ہیں طنابیں، شیطان کی ہے صوم وصیام اس مہینے میں فرض سب کریں اتباع رب کے فرمان کی رب کو خوش ہم کریں اس فریضے …

Read More »

دعا

تجھ سے کرتا ہوں یا رب میں ہر اک دعا تو ہی سنتا ہے یا رب میری ہر دعا صدقِ دل سے تجھے جب پکارے کوئی اپنی رحمت سے کرتا ہے اس کو عطا نہ کرے جو دعا، تجھ سے یا رب اگر اس پہ ہوتا ہے تو، ناراض و خفا دعا ہے میری تجھ سے اے میرے رب عطا …

Read More »

نظم

(نظم) شیخ ذوالفقارعلی طاہر رحمہ اللہ داغِ مفارقت دے گئے شیخ ذوالفقار طاہر       سانحہ ہے یہ دل سوز، کرب و الم ہے ظاہر تصور میں نہ تھی مرگِ ناگہاں ان کی           یکایک اجل نے، آلیا ان کو آخر جاری ہے اس جہاں میں اصولِ گِل در گِل     سب کے سب ہیں یہاں پر، …

Read More »

نظم دعوتِ فکر

دعوتِ فکر فکر ہے تجھے کیوں، مال وزر ہی کمانے کی                          فکر کیوں نہیں اپنے رب کو منانے کی مال کی ہے تمنا، موجزن تیرے دل میں                          تیری تدبیر ہے بس مال ودولت بڑھانے کی ہر …

Read More »

تزکیہ نفس

تزکیہ نفس لاشعوری میں آخر رہے گا تو کب تک                    بے قدر ہے گزاری زندگی تو نے اب تک معصیت میں ترا دن، گزرتا ہے سارا                       سلسلہ یہ بدی کا، جاری رہتا ہے شب تک طاقِ نسیاں پہ تو نے خود …

Read More »

’’بیداری‘‘

’’بیداری‘‘ اتنا غافل ہے کیوں زیست سے اے مدہوش                                 تجھ کو کیوں کچھ نہیں ہے زندگانی کا ہوش ہر گھڑی ہے گزرتی، خوابِ غفلت میں تیری                              تجھ پر حاوی ہے کیوں …

Read More »

یوم عظیم ۔ نظم

وقوع آخرت کا، فیصلہ ہے اٹل                                          ٹلنے والی نہیں قیامت کی کل قریب الوقوع ہے، آخرت کی گھڑی                                     پوری ہونے کو ہے بس، …

Read More »

نظم

المعہد السلفی کی نئی بلڈنگ کے افتتاح کےموقع پر پڑھی گئی مبارک ہو معہد کی بن چکی اپنی عمارت ہے خلوص وخیر خواہی کے عزم سے یہ عبارت ہے شکر رب کا بجا لائیں اسی کی ہے عطا ساری حقیقت میں اسی ہی کی، خصوصی یہ عنایت ہے خوشی ہے دید کے قابل ہماری اس عنایت پہ بیاں جو ہوسکے …

Read More »