نظم دعوتِ فکر

دعوتِ فکر

فکر ہے تجھے کیوں، مال وزر ہی کمانے کی

                         فکر کیوں نہیں اپنے رب کو منانے کی

مال کی ہے تمنا، موجزن تیرے دل میں

                         تیری تدبیر ہے بس مال ودولت بڑھانے کی

ہر گھڑی تیری خواہش بس یہی ہے جہاں میں

                         معتبر میں رہوں بس، نظر میں زمانے کی

تیری سوچوں کا محور مال و زر کی طلب ہے

                         نہیں تجھ کو پرواہ آخرت کے ٹھکانے کی

دنیوی زندگی میں، ہر گھڑی تو مگن ہے

                         فکر ہے تجھے بس، دنیا بھر کے خزانے کی

جاہ ومنصب کا طالب، تو ہے کیوں اس جہاں میں

                         یہ تو چیزیں ہیں تجھ کو، راہِ حق سے ہٹانے کی

فسق وعصیاں پہ کب تک، مصر تو رہے گا

                         روش چھوڑ دے، اپنا وقت یوں گنوانے کی

اطاعت نہ کر تو، شیطاں کے چلن کی

                          چال ہے اس کی ہر دم، جال میں بس پھنسانے کی

یاد رکھ تو حشر کو، نہ بھلا تو اسے

                           جستجو کر ہمیشہ، فلاح کو تو پانے کی

طرز زندگی کا، بدل تو اے اثریؔ

                         غرض وغایت یہی ہے میرے اس ترانے کی

About حافظ عبدالکریم اثری

Check Also

تزکیہ نفس

تزکیہ نفس لاشعوری میں آخر رہے گا تو کب تک            …

جواب دیجئے