تزکیہ نفس

تزکیہ نفس

لاشعوری میں آخر رہے گا تو کب تک                    بے قدر ہے گزاری زندگی تو نے اب تک

معصیت میں ترا دن، گزرتا ہے سارا                       سلسلہ یہ بدی کا، جاری رہتا ہے شب تک

طاقِ نسیاں پہ تو نے خود کو رکھا ہے کیوں              چھوڑ بیٹھا ہے تو، اخلاق و ادب تک

خوف و ڈر آخرت کا نہیں ہے تجھے کچھ                 بھول جائے گا اس دن تو اپنا نسب تک

راہِ عصیاں ہمیشہ، تیرا مقصد رہا ہے                      تجھ کو پہنچائے گا، یہ رب کے غضب تک

موت سے جس گھڑی تیرا پالا پڑے گا                     یاد تجھ کو نہ ہوگی زندگی کی طرب تک

ارتکابِ گناہ سے باز آئے گا تو جب                         تب ملے گی رسائی، تجھے اپنے رب تک

سرخرو ہوسکے گا کبھی نہ تو غافل                        تزکیہ نفسِ بد کا، نہ کرلے تو جب تک

چھوڑ دے معصیت کو، وقت باقی ہے کچھ                 نہ ملے گی معافی، جان ہوگی جب لب تک

نفس کا تزکیہ ہی، فلاح کا ہے ضامن                        کاش پہنچے صدا، اثریؔ کی یہ سب تک

About حافظ عبدالکریم اثری

Check Also

نظم

(نظم) شیخ ذوالفقارعلی طاہر رحمہ اللہ داغِ مفارقت دے گئے شیخ ذوالفقار طاہر      …

جواب دیجئے