Home » مجلہ دعوت اہل حدیث » 2018 » شمارہ فروری و مارچ » اے رونق ہائے محفل ما مولاناذوالفقار علی طاہر کاسانحہ ار تحال

اے رونق ہائے محفل ما مولاناذوالفقار علی طاہر کاسانحہ ار تحال

ِِ۳ جنوری ۲۰۱۸ع شام کو جیسے کالج کی ڈیوٹی سے فارغ ہوکر واپس گھر پہنچا تو موبائیل پر کالز اور ایس ایم ایس آنا شروع ہوگئیں، جن میں یہ  روح فرسا  اور المناک خبر ملی کہ اسلامی علوم و فنون کے ماہر، تدریس کے شہنشاہ،عالم ربانی، جماعت اہلحدیث سندھ کے روح رواں، اور ماہنامہ مؤقر دعوت اہلحدیث حیدرآباد کے مدیر شہیر ، حضرت مولانا ذوالفقار علی طاہر کراچی کے ایک جان لیواٹریفک حادثے میں خالق حقیقی سے جا ملے بار بار زبان پر اناللہ و انا الیہ راجعون جاری ہوگیا ۔

شدیم خاک ولیکن ببوئے تربت ما

تواں شناخت کزین خاک مرد مے خیزد

آہ ۔جس مرد حق نے اسلام کی آفاقیت وحقانیت کے لئے پوری زندگی وقف کردی جس نے باب الاسلام سندھ دورافتادہ،گائوں،میں شرک و بدعت کے بتکدوں میں آذان حق دی و ہ اچانک ہم سے بچھڑ کر پیوند ہ خاک بن گیا،ابوزبیر ذوالفقار علی طاھر بن حمزہ علی( متوفی ۲۰۰۵ع) بن مرحوم غلام حیدر خان (متوفی۱۹۸۳ع) بھی اپنے دور کے انتہائی نیک سیرت، پرہیزگار، اورصالحین میں شمار ہوا کرتے تھے۔

تاریخ پیدائش اور ابتدائی تعلیم:

مولانا  ذوالفقار علی طاھر تحصیل کھپرو ضلع سانگھڑ کے شہر سامارو موری میں ۴ مارچ ۱۹۷۲ع میں پیدا ہوئے،آپ نے ابتدائی تعلیم پرائیمری اور قرآن عظیم ناظرہ اپنے گائوں میں حاصل کی ، جس کے بعد آپ نے مڈل اور مئٹرک بھی کھپرو سے کئے، جس کے بعد انکے اقرباء کی خواہش پر انہوں نے علوم اسلامیہ اور درس نظامی کے لئے باقاعدہ مدرسہ قاسم العلوم ٹنڈوآدم روڈ میرپورخاص میں داخلہ لیا، جہاں ابتدائی فارسی اور عربی کے قواعد سے تعلیم شروع کی، انکے اساتذہ کرام عمومًا دیوبند مکتب فکر کے حامل تھے،جن میں سے چند کا تذکرہ حسب ذیل ہے۔

۱۔مولانا غلام قادر مرّی پھلڈیوں سانگھڑ والے جن سے مولانا طاھر نے ابتدائی کتب فارسی کے قواعد، پہلی فارسی، کریما،نامہ حق،پندنامہ وغیرہ پڑہیں۔

۲۔مشہور مصنف،اسلامی اسکالر، پروفیسر مولانا حکیم امیرالدین مہر حفظ اللہ تعالی سابق ڈائریکٹر الدعوۃ اکیڈمی اسلام آبادسے بھی باقاعدہ ترجمۃ القرآن ،اور عربی گرائمر صرف و نحو اور ادب کی کتب پڑہیں۔

۳۔مولاناعطاء اللہ خاصخیلی ٹندو آدم والے سے آپ نے صرف ، نحو،باالحضوص علم الصّیغہ مین مثالی مہارت تامہ حاصل کی۔

۴۔مولانا سعیداحمدخان مکرانی وغیرہ سے بھی عربی اور فارسی کتب پڑھیں جن میں اخلاق محسنی، گلستاں و بوستاںسعدی اور ’مالابدمنہ‘شامل ہیں

۵۔مولانا سید احمدسعید وغیر ھم سے بھی عربی فارسی کا مروّجہ کورس پڑھا، واضح ہوکہ اس دور میں مدارس اسلامیہ کے کورس مین فارسی بے حد ضروری تھی چونکہ ایک عالم دین کا فارسی سے جہل بہت سارے علوم فنون اور معلومات کے خزینہ سے محروم کر دیتا ہے، اس زمانہ میں تو عربی گرائمر بھی فارسی کتب میں پڑھائی جاتی تھی مثلامشہور کتاب ارشاد الصرف اور اس کی شرح وغیرہ بے انتہا علمی افادیت کی حامل تھی ، (جیسا کہ خود راقم الحروف نے دو سال تک مدارس اسلامیہ میں فارسی مکمل کر کے پھر منشی فاضل کا امتحان پاس کیا) بھرحال مروجہ نصاب کو مکمل کرنے کے بعد مولانا ذوالفقار علی طاہرنے تقریبا ایک برس تک مدرسہ تعلیم القرآن والحدیث لیاقت کالونی (گھمن آباد) حیدرآباد میں محنت وعرق ریزی سے عربی کی ابتدائی جماعت پڑھی جہاں انہیں فضیلۃ الشیخ حافظ محمد ایوب صابر ،مولاناعبدالغفور رئوف ،شیخ شبیر احمد ،شیخ محمد زکریاوغیر ھم جیسے با وقار اساتذہ کرام سے کتب کماحقہ پڑھنے کی سعادت حاصل ہوئی۔ جس کے بعد ۱۹۸۸ع میں آپ نے عربی کی جماعت دوم کے لئے کراچی کی قدیم علمی ادبی اور باوقار دینی درسگاہ جامعہ دارالحدیث رحمانیہ سفید مسجد سولجر بازار میں داخلہ لیا جہاں سے بفضلہ تعالیٰ بقیہ علوم وفنون کو پایہ تکمیل تک پہنچایا۔

اساتذہ :

 ۱۹۹۴ع میں فضیلۃ الشیخ علامہ عبدالخالق رحمانی رحمہ اللہ تعالی جیسے اور فضیلۃ الشیخ علامہ عبد اللہ ناصر رحمانی حفظہ اللہ  جیسے محدث العصر علمی شخصیات سے دستار فضیلت و سند فراغت سے سرفراز ہوئے انکو اپنی پوری جماعت میں اوّل پوزیشن ملی جس کے باعث انعام و اکرام کے مستحق ٹہرے، جہاں پر آپ نے اپنے وقت کے کئی جلیل القدر عُلمائے عظام سے اکتساب علم کیا تھا، مثلًا استاد محترم علامہ عبد اللہ ناصر رحمانی حفظہ اللہ  سے الفیہ ابن مالک، شرح نخبۃ الفکر ، جامع ترمذی، سنن نسائی اور صحیح البخاری جلد دوم وغیرھم جیسی کلیدی کتب پڑھیں، ان کے علاوہ دیوبندی عالم دین مولانا غلام رسول سے دستورالمبتدی، اصول شاشی،قدوری، ھدایہ، شرح جامی کے علاوہ تفسیر جلالین و تفسیر بیضاوی جیسی اہم کتب بھی پڑھیں، اسی ادارے میں میرے دیرینہ دوست، مرحوم مفتی محمد صدیق رحمہ اللہ تعالی جیسی فاضل شخصیت سے آپ نے شرح تہذیب، مولانا امان اللہ ناصر سے حجۃ اللہ البالغہ ، سید محمد شاہ سے سنن ابو دائود، الشیخ عبدالمجید سادھوی سے بلوغ المرام، شیخ افضل سردار سے مشکٰوۃ المصابیح (مکمل)  فضیلۃ الشیخ  محمد دائود شاکرحفظہ اللہ تعالیٰ سے معلم الانشاء، مقامات حریری، استاد العُلماء مولانا عبداللہ چیمہ، جیسی قد آور شخصیت سے کافیہ پڑھی، مزید فضیلۃ الشیخ محمد افضل اثری حفظہ اللہ تعالیٰ سے مرقاۃ، علم الصّیغہ، شرح مائۃ عامل، ھدایۃ النحو، سنن ابن ماجہ، صحیح مسلم جلد اوّل و دم، صحیح البخاری جلد اوّل جیسی گرانقدر علمی کتب پڑھنے کی سعادت حاصل کی، اس طرح مولانا ذوالفقار علی طاھر نے فراغت کے بعد ایک سال تک مشہور علمی ادارے جامعۃ الاحسان کراچی اور چار سال تک جامعہ دارالحدیث رحمانیہ میں فن تدریس کے فرائض بحسن و خوبی سرانجام دیئے، اسی دوراں آپ نے وفاق المدارس السّلفیہ سے شھادۃ العالمیہ اور کراچی یونیورسٹی سے ’مولوی فاضل عربی‘بھی پاس کر لیا، سچ ہے

کلیوں کو میں سینے کا لہو دے کرچلا ہوں

صدیوں مجھے گلشن کی فضا یاد کرے گی

حسن اتّفاق سے مولانا ذوالفقار علی طاہر نے اپنی پیدائش کے پورے بیس ۲۰ سال کے بعد ۴ مارچ ۱۹۹۲ع کو اپنی خالہ کی بیٹی سے شادی کی جس سے اﷲ تعالیٰ نے انکو دو فرزند عطافرمائے ۔

۱۔زبیر ۲۔زہیر جوا بھی طالب علمی کی کاوشوں میں مصروف عمل ہیں اللہ تعالیٰ ان کو اپنے والد کا جا نشیں بنائے مولانا طاھر اپنے خانداں میں پہلے فرد تھے جس نے مدارس اسلامیہ سے علوم و فنوں میں تکمیل کرکے اپنے علاقہ میں کتاب و سنت کی دعوت دی،

خدا بخشے بہت سی خوبیاں تھیں مرنے والے میں

المعہد السلفی میں تقرر:

۱۹۹۹ع میں سندھ کے بطل جلیل فضیلۃ الشیخ عبداللہ ناصر رحمانی حفظہ اللہ  کے حسن انتخاب پر المعہد السلفی للتعلیم و التربیہ کراچی میں ایک باوقار استاد اور محسن منتظم کے عہدے پر مولانا طاہر فائز ہوئے، پھر یہ اشاعت کتاب وسنت کا سلسلہ پورے انیس سال تک باقاعدہ جاری رہا، تا آنکہ مولانا طاہرنے جاں جانِ آفریں کے حوالے کی ،آپ ہمیشہ  ’ تواضع لِلّٰہ‘ کا عکس نظر آیا کرتے تھے،مزید یہ کہ مؤقر ماہنامہ دعوت اہلحدیث کے اردو شمارے کی ادارت بھی یکم ستمبر۲۰۱۰ ءسے تادم حیات باقاعدہ مولانا طاہر کی زیرنگرانی رہی ،مولانا طاہر کے سانحہ ارتحال سے ویسے تو پوری جماعت تنہاہوگئی لیکن مؤقر دعوت اہلحدیث المعہدالسلفی اور علامہ عبداللہ ناصر رحمانی حفظہ اللہ  اپنے عزیز القدر رفیق و شفیق سے محروم ہوگئے۔

ڈھونڈو گے اگر ملکوں ملکوں ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم

تعبیر ہے جس کی حسرت و غم اے ہم نفسووہ خواب ہیں ہم

(شاد عظیم آبادی)

دینی خدمات:

مولانا ذوالفقار علی طاہر بیک وقت ایک بہترین داعی، مؤثر خطیب، مثالی مدرس و منتظم ،جمعیت اہلحدیث کی مجلس مشاورت کے ممبر، سندھ کے ناظم امتحانات اور مؤقر دعوت اہلحدیث کے مدیر شہیر تھے، انہوں نے خصوصًا فن تدریس میں گرانقدر خدمات سرانجام دیں، ’دعوت اہلحدیث‘ کے پر مغز اداریے، جاندار محققانہ مضامین، مقالات علمیہ، حالات حاضرہ سے باخبر رہ کر بھرپور بے لاگ تجزیے، شذّرات علمیہ کے علاوہ جب بھی کسی معاصر نے بلاوجہ طائفہ منصورہ، مسلک اہلحدیث اور کتاب و سنت کے خلاف لکھا تو مولانا طاہر مرحوم نے بروقت بھرپور علمی تعاقب کرتے ہوئے کلمۃ الحق کا فریضہ سرانجام دیا، مختصرًا آپ لایخافون لومۃ لائم کے پیکر تھے۔

کہتا ہوں وہ ہی بات سمجہتا ہوں حق جسے

 میں زہر ہلاہل کوکبھی کہہ نہ سکا قند

نمایاں صفات:

مولانا طاہر صاحب طلباء کی تعلیم و تربیت پر بھرپور توجہ دیا کرتے تھے، اسباق کی باقاعدگی کے متعلق ہمیشہ متفکر رہا کرتے تھے، وہ پہلے خود وقت کی پابندی کرتے پھر اوروں کو کہتے، اس بات کی گواہی آج بھی علماء و طلباء دیتے ہوئے نظر آتے ہیں، مولانا طاہر کا طریقہ تدریس انتہائی جاندار ، پروقار،مدلّل،علمی انداز میں سہل، عام فہم، مختصر مگر سحّرانگیزہوا کرتا تھا، مشکل موضوعات کو بھی احسن انداز سے طلباء کو ذھن نشین کرادیا کرتے تھے،ادارہ معہد کے پورے عملے سے انکا انتہائی مشفقانہ رویہ رہا، آپ طلباء کے سامنے اٹھتے بیٹھتے، صورت و سیرت میں اپنے اکابر اسلاف کی جیتی جاگتی تصویر نظر آتے ، مولانا ذوالفقار علی ویسے تو معقولات و منقولات میں مہارت تامہ رکھتے تھے، تاھم المعہد السلفی للتعلیم و التربیہ میں انکے حوالے جو اسباق ہوا کرتے تھے ان میں تفسیر جلالین، صحیح مسلم، مؤطا امام مالک، سنن اربعہ، مشکٰوۃ المصابیح،شرح نخبۃ الفکر، حجۃ اﷲ البالغہ، فصول اکبری، ھدایۃ النحواور العبرات وغیرہا شامل تھیں، جن سے طلباء خوب استفادہ کیا کرتے تھے،

آہ۔آج المعہدالسلفی کے ہونہار تلامذہ اپنی کتابیں کھولے دار التدریس میں اپنے محسن مرّبی استاد المکرم کے علمی فیوض و برکات سے استفادہ کے لیے نمناک آنکھوں سے چشم براہ ہونگے، لیکن  یہاں سے جانے والے بھی کبھی واپس لوٹے ہیں؟ عرصہ تک طلباء ان کو بھول نہ پائیں گے،

دستک ہوئی دوڑ کے دہلیز تک گیا،

باہر ہوا کا شور تھا، چہرہ اتر گیا،

مولانا طاھر اتباع سنت کا حد سے زیادہ اہتمام کیا کرتے توحید و سنت کو اپنے لیے متاع گرانمایہ سمجھتے تھے، سچائی، سادگی، کفایت شعاری، عاجزی، فروتنی، انکساری اور رواداری انکا شعار تھا، کُن فی دنیا کانک غریبٌ او عابر سبیلٌ کا آپ مظہر تھے۔

جس سے زینت تھی چمن کی پھول وہ مرجھا گیا

گلشن علم و عمل پر چھا گئی اک دم خزاں

تلامذہ :

ویسے تو انکے تلامذہ انکے دروس علمیّہ سے استفادہ کرنے والے لاتعداد تھے تاہم چند علماء کرام کے اسماء گرامی حسب ذیل ہیں:

حافظ عبدالمالک مجاہد، مولانا حزب اﷲ بلوچ، حافظ محمد شعیب سلفی، حافظ عبداﷲ شمیم، حافظ محمد عثمان صفدر، حافظ آصف فاروق کمبوہ ، حافظ اصغر محمدی، حافظ عبیدالرحمٰن محمدی،حافظ صہیب احمد ثاقب،شیخ عبدالصمد المدنی j  جیسے لاتعداد علماء کرام شامل ہیں ۔

مسلک اور مسلکی شخصیات سے محبت:

میری ویسے تو مولانا طاہر سے دیرنیہ دوستی تھی لیکں چند سال قبل جامع بدیع العلوم مٹھی کے امتحانات سے فارغ ہوکر انہوں نے ایک دن اور رات ’خاکسار‘ کے غریب خانے کو رونق بخشی پھر پورا وقت کتابوں اور راشدی برادران کے متعلق یادوں کے ساگر موضوع بحث آتے گئے پھر اتنا خوش ہوئے کہ ناچیز اور میری لائبریری پر دعوت اہلحدیث میں ایک بھرپور اداریہ لکھ ڈالا، آپ نے دو مرتبہ ۲۰۱۳ع اور ۲۰۱۵ع میں عمرے کی سعادتیں حاصل فرمائیں، انکی غربت، سادگی اور بے سرو سامانی کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ جب انکا ایکسیڈنٹ میں اچانک انتقال ہوا تو ایک گاڑی میں اہل خانہ،گھر کا مختصر سامان، چند کھانے کے برتن،ایک دو ٹین کی پیٹیاں اور اوڑھنے بچھانے کے لیے رلیاں تھیں۔

ایک ایک کر کے ستاروں کی طرح ڈوب گئے

ہائے کیا لوگ میرے حلقہ احباب میں تھے

مولانا طاہر دل آویز  اور سحّر انگیز شخصیت کے مالک تھے، وہ بیک وقت مخلص دوست، مثالی داعی، ممتاز قلمکار، انشاپرداز، بہترین مترجم، باکردار معلم، نفیس مرّبی تھے، میں نے ہمیشہ انکو نہایت اختصار، جامعیت، پر مغز، معقولیت کے ساتھ حقیقت پسندانہ، جامع، مدلل اور محتاط گفتگو کا عادی پایا۔

کچھ ایسے بھی اٹھ جائیں گے اس بزم سے

جن کو تم ڈھونڈنے نکلو گے مگر پا نہ سکو گے

میں نے انکو افکار علوم اسلامیہ کے ساتھ، حالات حاضرہ کی حسّاسیت اور نزاکتوں سے بھی خوب واقف پایا، دینی تڑپ رکھنے والے جماعتی احباب کے وہ نہ صرف قدردان تھے بلکہ دوسروں کے جذبات و نظریات احساسات کی قدر کرنے کے فن سے بھی شناسا تھے، وہ روبرو ہوں، فون پر ہوں، خط و کتابت سے مخاطب ہوں مگر ہمیشہ محبت، مؤدت، شفقت، عزت اور اپنائیت کے فن سے متصّف نظر آتے تھے، میں نے مدت مدید سے انکو باہمی اعتماد، بردباری، تحمّل مزاجی،فہم و فراست میں مثالی انسان پایا۔

مٹ چلے میری امیدوں کی طرح حرف مگر

آج تک تیرے خطوط سے تیری خوشبو نہ گئی

(اختر شیرانی)

متوازن شخصیت:

وہ مادری زبان سندھی ہونے کے باوجود اردو مبیّن کی نزاکتوں سے بھی شناسا تھے پوری حیاتی اپنے اصولوں پر کاربند رہے لیکن کبھی بشری تقاضا کے تحت اگر کوئی کمی بیشی رہ جاتی تو مطلع ہونے پر ایک لمحہ بھی اعتراف میں تاخیر نہیں کرتے تھے، وہ شدید مخالفت میںبھی ’مغلوب الغضب ‘ ہونے  کے مرض سے مبرّا تھے، مولانا طاہر کو نابغہ روزگار علامہ سید بدیع الدین شاہ راشدی رحمہ اللہ اور فضیلۃ الشیخ علامہ عبداﷲ ناصر رحمانی حفظہ اللہ کی خصوصی تربیت، توجہ، محبت واعتماد نے ایک معتدل مزاج بلند پایہ عالم بنا دیا تھا، ان مایہ ناز شخصیات کی تربیت و شفقت سے آپ ایک تراشا ہوا  ہیرا محسوس ہوتے تھے، انکے اچانک سانحہ ارتحال سے پوری جماعت کا ناقابل تلافی نقصان ہوا، وہ مدت تک یاد آتے رہیں گے۔

اُجالے اپنی یادوں کے ہمارے ساتھ رہنے دو

نہ جانے کس گلی میں زندگی کی شام ہوجائے

مختصرًا آپ صالحہ صفت ، راست باز، وضعدار، مہذب، شائستہ اور دھیمہ لہجہ کے مالک تھے، انکے جاننے والے بخوبی جانتے ہیں کہ وہ ضرورت سے زیادہ عامیانہ گفتگو سے ہمیشہ احتراز کیا کرتے، صاف گو سیدھے سادے، متقی،پاکیزہ اوصاف ،عبادت گذار انسان تھے، کبھی انکو کسی سے حسّد کرتے نہیں دیکھا، وہ دوسروں میں ہمیشہ حسنِ ظن رکھا کرتے تھے، وہ کسی زندہ یا انتقال شدہ مسلمان بھائی کی غیبت، عیب جوئی، تعصّب اور کردار کشی سے کوسوں دور رہتے، ورنہ موجودہ دور میں ایسی زندگی گذارنا بیحد مشکل ہے، بلکہ یہ اوصاف حمیدہ  اب  ’عنقا‘ ہوتے نظر آتے ہیں،

زمانہ بڑے شوق سے سن رہا تھا

ہمیں سو گئے داستاں کہتے کہتے

( ثاقب لکھنوی)

مولانا ذوالفقار علی طاہر خالصتًا علمی ذوق کے حامل بزرگ تھے، ان کا علوم قرآنی و احادیث رسول ﷺ سے بے انتہا شغف تھا بلاشبہ آپ ان عُلمائے عظام میں سے تھے جن کا اوڑھنا بچھونا اتّباع سنت تھا، ایسے اصحابِ علم و فضل اقوام میں مدتوں کے بعد جنم لیتے ہیں، آپ نے پوری حیاتی سوز دل سے فکر و نظر کے چراغ روشن کئے انکی یادیں اور باتیں زبانوں کو حلاوت اور نگاہوں کو بصیرت عطا کرنے والی تھیں،

سالہا زمزمہ پرواز جہاں خواھد بود

زاین نواھاکہ دراین گنبد گردن زدہ است

کاتبِ تقدیر کافیصلہ:

مولانا ذوالفقار علی طاھر کو مرحوم لکھتے ہوئے قلم کانپتا ہے دل دکھتا ہے، انکی شیرین یادوں اور باتوں سے دل لبریز ہے، جب بھی ان سے ملاقات ہوتی تو انکی آنکھوں میں تبسّم،چہرہ پھول کی طرح کھِل اٹھتا اور پھر ہمیشہ کی طرح رنگ آشنائی سے نوازتے لیکن خالقِ کائنات کے فیصلے کے سامنے کسی کو چوں و چراں کی کیا مجال ہے؟’ کلُّ مَن عَلیھا فَان‘ مولانا طاہر اپنے لاکھوں چاہنے والے محبت کرنے والے طلباء، اساتذہ،علماء، عامۃ الناس، اعزہ اقرباء اور قریبی رشتیداروں کو دکھی دل چھوڑ کر اپنے خالق حقیقی سے جاملے،

اے رونق ہائے محفل ما۔ رفتیدولے نہ ازدل ما

غم فراق بھی کیا عجیب ہے جس سے جتنا تعلق خاطر ہوتا ہے اُتنا غم بھی زیادہ، ایسے لوگوں کی باتیں اور یادیں مدت تک تڑپاتی رہتی ہیں، اور ایسے لوگ اب ملتے بھی کہاں ہیں؟

یا الٰہی! تیرہ عاجز مخلص بندہ تیرے حضور قیام و قُعود رُکوع سُجود سے سر جھکائے حاضر ہوا ہے اپنے جود و کرم سے انکی مغفرت فرما، انکی اگلی منزلوں اور مسافتوں کو آسان فرما، انکی لحد کو باغیچہ فردوس بنا، اور انکے پس ماندگان کو صبر جمیل کی توفیق عطا فرمااور ہم سب کو جادہ مستقیم پر چلنے کے ساتھ تو اپنے پسندیدہ بندے بنا۔ آمین یا ربَّ العالمین

الا یا ساکن القصر المعلٰی

ستُدفن عن قریب فی التراب

لنا ملک ینادی کل یوم

لدوا  للموت وابنوا للخراب

About پروفیسر مولابخش محمدی

پروفیسر مولابخش محمدی،مٹھی تھرپارکر

Check Also

ماہنامہ ’’دعوت اہل حدیث ‘‘کی اشاعت پر ایک نگاہ

معزز قارئین کرام ! السلام علیکم :امابعد بفضلہ تعالیٰ مؤقر ’’دعوت اہل حدیث‘‘ سندھی اور …

جواب دیجئے