یوم عظیم ۔ نظم

وقوع آخرت کا، فیصلہ ہے اٹل                                          ٹلنے والی نہیں قیامت کی کل

قریب الوقوع ہے، آخرت کی گھڑی                                     پوری ہونے کو ہے بس، معین اجل

پل میں تلپٹ جہاں کا، ہوگا سارا نظم                                   بکھرے ذروں کی مانند سب اڑیں گے جبل

چاند وسورج ستارے، فلکیات وسماء                                    کچھ رہے گی نہ باقی کسی کی اصل

بپا ہوگا ہر سو، بے قراری کا عالم                                      نفسا نفسی میں ہوگا ہر نحیف وبطل

سب کا ہوگا حشر نہ بچے گا کوئی                                     رب کا وعدہ ہے یہ، نہیں ہے ہزل

ہر بندہ وہاں پہ، ہوگا غلطاں و پیچاں                                    سب کے چہروں پہ واں، پڑے ہوں گے بل

نہ چلے گا کسی زور آور کا زور                                      کام آئے گا کچھ نہ کسی کا دغل

ہر کسی کو فکر، اپنی ہوگی وہاں                                        بھول جائے گا ہر اک اپنی پیاری نسل

سب کے اعمال کا، ہوگا برحق وزن                                    ہر کسی کو ملے گا پھر عمل کا بدل

نہ ہوگا کسی پر کوئی ظلم وستم                                        رب کرے گا سبھی سے انصاف و عدل

تجھ کو مہلت ہے آج کرلے سوچ و بچار                             راہِ شیطاں پہ غافل، تو کبھی بھی نہ چل

فانی دنیا میں اثریؔ نہ لگا اپنا دل                                       تجھ میں ہے گر سیانے ذرا سی عقل

منہ کی بدبو ہے پیاری، مسک سے بھی زیادہ                        رب تعالیٰ نے خود ہی یہ خوبی بیان کی

ہوتی ہے صائم کو فرحت عندالافطار                                  آخرت میں ہوگی رب سے لقیان کی

روزہ رکھنے کی ہو، جس کی عادت سدا                             ہوگی اس کو صدا باب ریان کی

جس نے ضائع کیا یہ مبارک مہینہ                                    گامزن ہے وہ راہ پہ، ظلم وعدوان کی

ہو اثر صوم کا، بعد رمضان بھی                                        بن نہ جائے دوبارہ صورت عصیان کی

اس مہینے میں ہو، راضی سب سے رحمان                          یہ دعا ہے اثری، اس سخن دان کی

نفس کے جذبات کو، صوم کرتا ہے پاک                                ہے دوائی صیام، نفس کے ہیجان کی

مقصدِ صوم ہے، نفس کی تطہیر خاص                                ہے صفائی صیام، قلوب واذہان کی

About حافظ عبدالکریم اثری

Check Also

نظم

(نظم) شیخ ذوالفقارعلی طاہر رحمہ اللہ داغِ مفارقت دے گئے شیخ ذوالفقار طاہر      …

جواب دیجئے