’’بیداری‘‘

’’بیداری‘‘

اتنا غافل ہے کیوں زیست سے اے مدہوش                                 تجھ کو کیوں کچھ نہیں ہے زندگانی کا ہوش

ہر گھڑی ہے گزرتی، خوابِ غفلت میں تیری                              تجھ پر حاوی ہے کیوں نفس کا اتنا جوش

تگ و دو ہے تیری، دنیاداری کی حد تک                                      تو ہے شام و پگاہ، طالبِ ناؤنوش

دین سے ہے نہنگ، ناآشنائے محض تو                                      کر چکا ہے حشر کو، تو یکسر فراموش

تو ہے طامع فقط یوں، دنیائے دنی کا                                         کھپایا اسی میں بہرگام تن و توش

زندگی ہے فقط چار دن کا تماشا                                              تجھ کو کرنا پڑے گا، موت کا جام نوش

تیرا ہوگا تمامی، جب وقتِ اجل                                               ہو سکے گا نہ اس دم کہیں بھی روپوش

تجھ کو کرتا ہوں میں اُپدیش و نصیحت                                      نہ ہو تو زینہار ، بتر گراں گوش

تیرا مطمح نظر ہو، حیاتِ تقشف                                             زیست میں تو رہے بس، سدا خرقہ پوش

تجھ کو بیدار کرنا، فرض تھا اے اثریؔ                                     ہوچکا ہوں میں اپنے، فرض سے سبکدوش

About حافظ عبدالکریم اثری

Check Also

تزکیہ نفس

تزکیہ نفس لاشعوری میں آخر رہے گا تو کب تک            …

جواب دیجئے