Home » حافظ عبدالکریم اثری

حافظ عبدالکریم اثری

تزکیہ نفس

تزکیہ نفس لاشعوری میں آخر رہے گا تو کب تک                    بے قدر ہے گزاری زندگی تو نے اب تک معصیت میں ترا دن، گزرتا ہے سارا                       سلسلہ یہ بدی کا، جاری رہتا ہے شب تک طاقِ نسیاں پہ تو نے خود …

Read More »

’’بیداری‘‘

’’بیداری‘‘ اتنا غافل ہے کیوں زیست سے اے مدہوش                                 تجھ کو کیوں کچھ نہیں ہے زندگانی کا ہوش ہر گھڑی ہے گزرتی، خوابِ غفلت میں تیری                              تجھ پر حاوی ہے کیوں …

Read More »

یوم عظیم ۔ نظم

وقوع آخرت کا، فیصلہ ہے اٹل                                          ٹلنے والی نہیں قیامت کی کل قریب الوقوع ہے، آخرت کی گھڑی                                     پوری ہونے کو ہے بس، …

Read More »

نظم

المعہد السلفی کی نئی بلڈنگ کے افتتاح کےموقع پر پڑھی گئی مبارک ہو معہد کی بن چکی اپنی عمارت ہے خلوص وخیر خواہی کے عزم سے یہ عبارت ہے شکر رب کا بجا لائیں اسی کی ہے عطا ساری حقیقت میں اسی ہی کی، خصوصی یہ عنایت ہے خوشی ہے دید کے قابل ہماری اس عنایت پہ بیاں جو ہوسکے …

Read More »

محاسبۂ نفس

’’محا سبۂ نفس‘‘ تجھ کو کیاہوگیا، تیراحال ہے عجیب کچھ فکر کر حشر کی، جو بہت ہے قریب ہے یہ دنیا کی زینت، متاعِ غرور دل لگاتا نہیں یاں کوئی بندہ لبیب دنیا کی زندگی ہے، مومن کا قید خانہ خود کو لام بناتو، اپنے نفس کا حسیب وقت کم ہے بہت، سنبھل جا ذرا تو آخرت کی فکر کر …

Read More »

ازلی دشمن

                                ازلی دشمن جہاں میں ہے شیطاں، ابن آدم کا دشمن                                         دعوتِ معصیت میں، وہ ہے رہتا مگن ابن آدم ازل سے شیطاں کا ہدف ہے  …

Read More »

دعوتِ فکر

                                                                دعوتِ فکر فکر ہے تجھے کیوں، مال وزر ہی کمانے کی                            فکر کیوں نہیں اپنے …

Read More »